Get Adobe Flash player
ہوم پیج

١

آپ صلى الله عليه وسلم  کی رسالت پر ایمان لانا اسطرح كہ آپصلى الله عليه وسلم الله تعالى كے آخرى نبى اور رسول ہيں

اللہ تعالی نے فرمایا:{ﺳﻮ ﺗﻢ اللہ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻؤ}( التغابن: ٨)

اللہ تعالی نے فرمایا ہے: { (ﻟﻮﮔﻮ!) ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻛﺴﯽ ﻛﮯ ﺑﺎﭖ ﻣﺤﻤﺪ (صلى الله عليه وسلم)  ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﻜﻦ ﺁﭖ الله ﺗﻌﺎﻟ ﻛﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﺒﯿﻮﮞ ﻛﮯ ﺧﺘﻢ ﻛﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ}(الاحزاب:٤٠)

٢

آپ صلى الله عليه وسلم کی اطاعت واتباع اور شريعت ميں آپصلى الله عليه وسلم كے فيصلے كو مكمل طور پر تسليم كرنا

اللہ تعالی نے فرمایا ہے: { ﺳﻮ ﻗﺴﻢ ﮨﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺮﻭﺭﺩﮔﺎﺭ ﻛﯽ! ﯾﮧ ﻣﻮﻣﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﻜﺘﮯ, ﺟﺐ تكـ ﻛﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﺁﭘﺲ ﻛﮯ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﻛﻮ ﺣﺎﻛﻢ ﻧﮧ ﻣﺎﻥ ﻟﯿﮟ, ﭘﮭﺮ ﺟﻮ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺁﭖ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻛﺮ ﺩﯾﮟ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻛﺴﯽ ﻃﺮﺡ ﻛﯽ ﺗﻨﮕﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺎﺧﻮﺷﯽ ﻧﮧ ﭘﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻣﺎﻧﺒﺮﺩﺍﺭﯼ ﻛﮯ ساتهـ ﻗﺒﻮﻝ ﻛﺮ ﻟﯿﮟ} (النساء:٦٥) {ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺟﻮ كچهـ ﺭﺳﻮﻝ ﺩﮮ ﻟﮯ ﻟﻮ, ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺭﻭﻛﮯ رک ﺟﺎؤ} ( الحشر :٧)

٣

آپصلى الله عليه وسلم اپنے والدين، اولاد اور تمام كائنات سے زياده محبوب ہيں

اللہ تعالی نے فرمایا ہے: ﺁﭖ ﻛﮩﮧ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﻛﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺑﺎﭖ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﮍﻛﮯﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﯿﻮﯾﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻛﻨﺒﮯ ﻗﺒﯿﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻛﻤﺎﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺎﻝ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺗﺠﺎﺭﺕ ﺟﺲ ﻛﯽ ﻛﻤﯽ ﺳﮯ ﺗﻢ ڈﺭﺗﮯ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺣﻮﯾﻠﯿﺎﮞ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﭘﺴﻨﺪ ﻛﺮﺗﮯ ﮨﻮ ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ الله ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﯽ ﺭﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﺩ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻋﺰﯾﺰ ﮨﯿﮟ, ﺗﻮ ﺗﻢ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻛﺮﻭ ﻛﮧ الله ﺗﻌﺎﻟ ﺍﭘﻨﺎ ﻋﺬﺍﺏ ﻟﮯ ﺁﺋﮯ۔ الله ﺗﻌﺎﻟ ﻓﺎﺳﻘﻮﮞ ﻛﻮ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ} (التوبة: ٢٤)

رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: (تم ميں سے کوئی شخص ايماندار نہيں ہو سكتا جب تک ميں اسكے نزديكـ اسكے باپ اسكى اولاد اور تمام لوگوں سے زياده محبوب نہ بن جاؤں)۔ متفق علیہ۔

٤

آپصلى الله عليه وسلم كى شان ميں مبالغہ آرائى سے ممانعت

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﺍﮮ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ! ﺁﭖ ﻛﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻣﯿﮟ كچهـ ﻧﮩﯿﮟ، الله ﺗﻌﺎﻟ ﭼﺎﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﻥ ﻛﯽ ﺗﻮﺑﮧ ﻗﺒﻮﻝ ﻛﺮﮮ  ﯾﺎ ﻋﺬﺍﺏ ﺩﮮ, ﻛﯿﻮﻧﻜﮧ ﻭﮦ ﻇﺎﻟﻢ ہیں} (آل عمران:١٢٨

رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: "ميرى مدح وثنا ميں اتنا مبالغہ نہ كرنا جتنا عيسائيوں نے حضرت عيسى u كى مدح وثنا ميں كيا" متفق علیہ۔

٥

آپ صلى الله عليه وسلم كى مدد اور نصرت 

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﺳﻮ ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﻧﺒﯽ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻻﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﻛﯽ ﺣﻤﺎﯾﺖ ﻛﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﻛﯽ ﻣﺪﺩ ﻛﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﻮﺭ كا ﺍﺗﺒﺎﻉ ﻛﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﻥ ﻛﮯ ساتهـ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ, ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮒ ﭘﻮﺭﯼ ﻓﻼﺡ ﭘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮨﯿﮟ} (الأعراف:١٥٧)

٦

آپ صلى الله عليه وسلم کی دعوت پھیلانا

{اللہ تعالی نے فرمایا: {ﺁﭖ ﻛﮩﮧ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﺍﮦ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺘﺒﻌﯿﻦ الله ﻛﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﻼ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ, ﭘﻮﺭﮮ يقين ﺍﻭﺭ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻛﮯ ساتهـ}(يوسف: ١٠٨

رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: "جو كچهـ مجهـ سے سيكهـ گئے ہو كہ آگے پہنچاؤ، اگرچہ ایک آیت ہی کیوں نہ ہو" بروايت بخاری-

٧

آپ صلى الله عليه وسلم كا ادب واحترام اور تعظيم 

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﯾﻘﯿﻨًﺎ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺗﺠﮭﮯ ﮔﻮﺍﮨﯽ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﺨﺒﺮﯼ ﺳﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺍﻭﺭ ﮈﺭﺍﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﻨﺎ ﻛﺮ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﮯ۔ ﺗﺎﻛﮧ ( ﺍﮮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮ), ﺗﻢ اللہ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ لاؤ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﯽ ﻣﺪﺩ ﻛﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ کا ادب ﻛﺮﻭ ﺍﻭﺭ اللہ ﻛﯽ ﭘﺎﻛﯽ ﺑﯿﺎﻥ ﻛﺮﻭ ﺻﺒﺢ ﻭﺷﺎﻡ}۔ (الفتح: ٨،٩)

 

٨

آپصلى الله عليه وسلم کے آل، ازواج مطہره اور صحابہ کرام سے محبت اور احترام كرنا

اللہ تعالی نے فرمایا: {تو ﻛﮩﮧ ﺩﯾﺠﺌﮯ! ﻛﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻛﻮﺋﯽ ﺑﺪﻟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﻣﮕﺮ ﻣﺤﺒﺖ ﺭﺷﺘﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﻛﯽ}( الشورى: ٢٣)

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﻣﻮﻣﻨﻮﮞ ﭘﺮ ﺧﻮﺩ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺣﻖ ﺭﻛﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ہيں اور پيغمبر كى بيوياں مومنوں كى مائيں ہيں} (الاحزاب: ٦)

نبی صلى الله عليه وسلم نے فرمایا:"میرے صحابہ کی عیب جوئی نہ کرو" متفق علیہ

رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمايا: "ميں نے تمہارے درميان دو چيزيں چهوڑى ہيں: الله كى كتاب يعنى قرآن كريم، اور ميرى عترت يعنى اہلٍ بيت- اور يہ دونوں ہر گز جدا نہ ہوں گے جہاں تكـ كہ دونوں ميرے پاس (اكٹهى) حوضِ كوثر پر آئيں گى"

٩

جب بهى آپصلى الله عليه وسلم کا ذکر ہو تو آپصلى الله عليه وسلم پر درود و سلام بھیجنا

اللہ تعالی نے فرمایا: {اللہ ﺗﻌﺎﻟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﺍﺱ ﻧﺒﯽ ﭘﺮ ﺭﺣﻤﺖ ﺑﮭﯿﺠﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ! ﺗﻢ ( ﺑﮭﯽ) اﻥ ﭘﺮ ﺩﺭﻭﺩ ﺑﮭﯿﺠﻮ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺏ ﺳﻼﻡ (ﺑﮭﯽ) ﺑﮭﯿﺠﺘﮯ ﺭﮨﺎ ﻛﺮﻭ}۔ (الاحزاب:٥٦) 

رسول اللہ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: "بخيل (كنجوس) آدمى وه ہے جس کے سامنے میرا نام لیا جائے اور وہ میرے اوپر درود نہ بھیجے" متفق علیہ-

١٠

آپ صلى الله عليه وسلم کے صحابہ كرام سے محبت اور آپصلى الله عليه وسلم كے دشمنوں كے ساتهـ بغض ركهنا

اللہ تعالی نے فرمایا:{الله ﺗﻌﺎﻟ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﻛﮯ ﺩﻥ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺭﻛﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﻛﻮ ﺁﭖ الله ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻛﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﻛﯽ ﻣﺨﺎﻟﻔﺖ ﻛﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺭﻛﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﺮﮔﺰ ﻧﮧ ﭘﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ}( المجادلة: ٢٢ )

١١

آپ صلى الله عليه وسلم کی لائی ہوئی شریعت کے مطابق اللہ تعالى کی عبادت کرنا 

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﭘﮭﺮ ﺍﮔﺮ ﻛﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﻛﺮﻭ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻟﻮﭨﺎؤ, الله ﺗﻌﺎﻟ ﻛﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﻭﺭ ﺭﺳﻮﻝ ﻛﯽ ﻃﺮﻑ، ﺍﮔﺮ ﺗﻤﮩﯿﮟ الله ﺗﻌﺎﻟ ﭘﺮ ﺍﻭﺭ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﻛﮯ ﺩﻥ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮨﮯ}( النساء:٥٩)

رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: "جس نے ہمارے اس دين (اسلام) ميں کوئی ایسى نئى بات پيدا كى، جو اس ميں نہ ہو، تو وه مردود ہے" متفق علیہ

١٢

آپ صلى الله عليه وسلم کی سیرت سے آگاہى حاصل كر كے  اسكى پيروى كرنا

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﯾﻘﯿﻨًﺎ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﻟﺌﮯ ﺭﺳﻮﻝ الله ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺪﮦ ﻧﻤﻮﻧﮧ (ﻣﻮﺟﻮﺩ) ﮨﮯ}(الاحزاب : ٢١)

١٣

آپ صلى الله عليه وسلم کی مسجد، قبر انور اور شہر مباركـ کا احترام كرنا

اللہ تعالی نے فرمایا: {ﺍﮮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻭﺍﻟﻮ! ﺍﭘﻨﯽ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﻧﺒﯽ ﻛﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺳﮯ ﺍُﻭﭘﺮ ﻧﮧ ﻛﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﻭﻧﭽﯽ ﺁﻭﺍﺯ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﻛﺮﻭ ﺟﯿﺴﮯ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ايكـ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﻛﺮﺗﮯ ﮨﻮ}(الحجرات:٢)

رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: {اے اللہ میری قبر کو بُت نہ بنا دینا کہ اسکی پوجا کی جائے}(بروايت احمد)

رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: {۔ ۔ ۔  اور  میں اسی طرح مدینہ کی حرمت کر رہا ہوں}۔ متفق علیہ 

Watch Makkah Live